بات حد سے بڑھ گئی۔۔!! وزیر اعظم عمران خان نے انٹیلی جنس ایجنسیوں سے کیا کام لینے کا فیصلہ کر لیا؟ یقین کرنا مشکل ہوگیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) واضح ہے کہ اب احساس کفالت پروگرام کے ذریعے 12 ہزار روپے ہر قلی کو فراہم کیے جائیں گے۔قلی کو رقم فراہم کرنے کیلئے وزیراعظم کی معاون خصوصی ڈاکٹر ثانیہ نشتر سے بات چیت کی گئی ہے اور معاملہ کابینہ میں بھی اٹھایا گیا ہے۔ ٹرین آپریشن معطل ہونے کے باوجود ریلوے نے کسی بھی ملازم کی تنخواہ اور پینشن میں تاخیر نہیں ہوئی۔

دوسری جانب وفاقی حکومت نے اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے انٹیلی جنس ایجنسیوں کی خدمات حاصل کرنے کا فیصلہ کر لیا۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت حکومتی اقدامات پر اجلاس ہوا جس میں ذخیرہ اندوزی کے خلاف آرڈیننس اور حکومتی اقدامات پر بریفنگ دی گئی۔ وزیراعظم کو بتایا گیا کہ سرحدیں سیل کیے جانے کے باعث اسمگلنگ میں نمایاں کمی آئی۔ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف آرڈیننس وفاقی کابینہ نے منظور کر لیا ہے جس کے بعد جو شخص اس مشکل وقت میں ذخیرہ اندوزی کرے گا، اسے سزا دی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق آرڈیننس کے مطابق ذخیرہ اندوزی میں ملوث افراد کو تین سال قید اور ضبط شدہ مال کی مالیت کا پچاس فیصد بطورجرمانہ عائد کیا جائے گا، آرڈیننس کااطلاق صرف وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی حدود میں ہوگا۔اس کے علاوہ ذخیرہ اندوزی میں ملوث ادارے کے ملازمین کے بجائے مالک کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔جو شخص حکام کو ذخیرہ اندوزی کرنےو الے شخص کے بارے میں اطلاع دے گا، اسے ضبط کئے جانےو الے سامان کا 10 فیصد حصہ دیا جائےگا۔اس کام کے لئے ڈپٹی کمشنر ایک سرکاری افسر تعینات کرے گا جسے کسی بھی گودام میں چھاپہ مار کر بند کرنے یا کھولنے کا اختیار دیا جائے گا۔آرڈیننس کے مطابق سرکاری افسر کو ضبط شدہ سامان کی نیلامی کرنے کا بھی اختیار حاصل ہوگا، جرم ثابت ہونے پر نیلامی کی رقم حکومت پاکستان کے اکاونٹ میں جمع ہوگی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.