لڑکیاں کس وجہ سے عمر سے پہلے بالغ ہو رہیں پاکستان سمیت پوری دنیا میں یہ کام ہو رہا

لاہور( نیوز ڈیسک) دوران حمل خواتین کی جانب سے دردکش ادویات کا استعمال ان کی بیٹیوں کی قبل از وقت بلوغت کا باعث بن سکتا ہے . یہ بات کچھ عرصے پہلے ڈنمارک میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی آراہوس یونیورسٹی کی تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ اگر دوران حمل ماﺅں کی جانب سے دردکش ادویات کا استعمال کیا جائے تو ان کی بیٹیوں میں بلوغت کی

علامات 10 یا 11 بلکہ اس سے بھی پہلے ظاہر ہوسکتی ہیں.‎ یہ پہلی بار ہے کہ کسی طبی تحقیق میں دوران حمل دردکش ادویات اور بچوں میں بلوغت کے درمیان تعلق کا جائزہ لیا گیا ا ور اس کے نتائج طبی جریدے امریکن جرنل آف ایپی ڈیمولوجی میں شائع ہوئے. محققین کا کہنا تھا کہ ہم نے دونوں کے درمیان تعلق دریافت کیا ہے اور دوران حمل جتنے ہفتے دردکش ادویات کا استعمال ہوتا ہے، لڑکیوں میں بلوغت کی علامات جلد سامنے آنے کا امکان بڑھتا ہے، تاہم لڑکوں میں ایسا نہیں دیکھا گیا. اس تحقیق کے دوران ڈنمارک کے برتھ کنٹرول کے ڈیٹا کا جائزہ لیا گیا اور ایک لاکھ خواتین پر مشتمل گروپ نے تفصیلی معلومات فراہم کیں کہ دوران حمل کتنی بار انہوں نے دردکش ادویات استعمال کیں. ان خواتین نے 2000 سے 2003 کے دوران 15 ہزار سے زائد بچوں کو جنم دیا جن میں 7 ہزار 697 لڑکے اور 8 ہزار 125 لڑکیاں تھیں، جن کا جائزہ 11 سال تک لیا گیا اور ان سے بلوغت کے سوال نامے ہر 6 ماہ بعد بھروائے گئے. تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ ان لڑکیوں میں بلوغت کی علامات اوسطاً ڈیڑھ سے 3 ماہ جلد نمودار ہوئیں جن کی ماﺅں نے حمل کے دوران 12 ہفتے سے زائد دورانیے تک دردکش ادویات کا استعمال کیا. محققین کے مطابق ڈیڑھ سے تین ماہ قبل بلوغت بظاہر تو اہم نہیں لگتا،مگر جب اس کا جائزہ دوران حمل دردکش ادویات کے استعمال کے تسلسل کے ساتھ لیا جائے تو لوگ نتائج کا نوٹس لینے پر مجبور ہوجائیں گے،

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *