مکمل پی ایس ایل کھیل کر ہی واپس جاوٴں گا دبنگ غیر ملکی بلے با زنے بڑا اعلان کر ڈالا، شائقین میں خوشی کی لہر دوڑ گئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)پانچ فرنچائزز سے تعلق رکھنے والے 14 غیر ملکی کھلاڑیوں اور کوچنگ عملے کے دو ممبران نے ابتک پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل )2020 میں مزید حصہ نہ لینے اور پاکستان چھوڑنے کا فیصلہ کیا ہے تاہم لاہور قلندرز کے کسی بھی غیرملکی کھلاڑی نے ابھی تک واپس جانے کا فیصلہ نہیں کیا۔

 دنیا بھر میں بڑھتے ہوئے کورونا وائرس کے خدشات کے درمیان لاہور قلندرز کے جارح مزاج بلے باز بین ڈنک نے پاکستان میں قیام کے اپنے فیصلے پر کھل کر اظہار خیال کردیا۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بین ڈنک کا کہنا تھا کہ پی ایس ایل حکام کورونا وائرس کی صورتحال کے بارے میں مسلسل آگاہ کررہے ہیں، یہ میرا ذاتی فیصلہ ہے کہ میں گھر جانا چاہتا ہوں یا رہنا چاہتا ہوں۔ انکا مزید کہنا تھا کہ فی الحال انہیں کوئی ٹینشن نہیں ہے اور اگر حالات ایسے ہی رہے تو مکمل پی ایس ایل کھیل کر ہی واپس لوٹیں گے۔ بین ڈنک کا مزید کہنا تھا کہ ہم نے آسٹریلیا میں حالات پر نظر رکھی ہوئی ہے اور حالات دیکھ کر کوئی فیصلہ کرسکتے ہیں۔ یاد رہے کہ کورونا وائرس کے پیش نظرپی ایس ایل میں شامل بعض غیرملکی کھلاڑیوں نے واپس جانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ذرائع پی سی بی کے مطابق کورونا وائرس کے پیش نظرپی ایس ایل میں شامل 10 غیرملکی کھلاڑیوں اور ایک کوچ نے واپس جانیکی خواہش ظاہرکی جس کے بعد پی سی بی نے بھی کھلاڑیوں کواپنے اپنے وطن واپس جانیکی اجازت دے دی ہے۔ فلائٹ آپریشن بند ہونے کے ڈرسے کھلاڑی واپسی کے خواہاں ہیں۔ کورونا وائرس کے خوف سے اب تک پی ایس ایل چھوڑ کرواپس اپنے ملک جانیوالوں میں کراچی کنگز کے ایلکس ہیلز، ملتان سلطانز کے ریلی روسو اور جیمز ونس، پشاور زلمی کے ٹام بینٹن، کارلوس بریتھ ویٹ، لیام ڈاسن، جیمز فوسٹر (کوچ)، لوئس گریگری اور لیام لیونگسٹن جبکہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے جیسن رائے اور ٹائمل ملز شامل ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.