بینظیر بھٹو شہید کی صاحبزادی بختاور کی شادی کس سے ہونے والی ہے ؟ نامور صحافی کی تہلکہ خیز بریکنگ نیوز

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)چند سال قبل کراچی میں ایک انتہائی افسوس ناک واقعہ پیش آیا جب اُس وقت کے ایس ایس پی ملیر راؤ انوار نے ایک فیک انکاؤنٹر میں کئی بے گناہوں کو ابدی نیند سُلا دیا جس میں ایک نقیب اللہ محسود بھی تھا سوشل میڈیا پر طوفان برپا ہو گیا تو اُس قت کے چیف جسٹس ثاقب نثار نے سوموٹو ایکشن لیاتھا۔

اب ایک بڑا نکشاف سامنے آیا ہے جب امریکی صحافی سنتھیا ڈی ر یچرڈ کا کہنا ہے کہ نقیب اللہ مسعود کا آصف زرداری کی بیٹی سے تعلق تھا جس کی وجہ سے انکے ساتھ یہ سب ہوا، پھر معاملے کو اور رُخ  دینے کی کوشش کی گئی اور یوں پوری دنیا میں پاکستان بدنام ہو کر رہ گیا ۔ تفصیلات کے مطابق سوشل میڈیا پر اس بحث کا آغاز اس وقت ہوا جب آصف زرداری کی بیٹی نے پیغام جاری کیا کہ پُرامن احتجاج کوئی جرم نہیں ہے “۔ آصفہ بھٹو کے جواب میں امریکی صحافی سنتھیا ڈی ر یچرڈ کا کہنا تھا کہ کہ ” درست بات کی ، پر امن احتجاج جرم نہیں ہے لیکن جن علاقوں میں سیکیورٹی ایجنسیوں نے بیش بہا کوششوں کے بعد امن قائم کیا ہو وہاں ہنگامہ برپا کرنا جرم ہے، سنتھیا ڈی ریچی کے پیغام پر ایک پاکستانی صارف جنکا نام فرخ کیانی تھا، وہ بھی میدان میں آگئے اور امریکی صحافی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ” ان سے پوچھیں کہ نقیب اللہ محسود کے واقعہ کے پیچھے کیا وجوہات تھیں “۔ جس پر سنتھیا دی ریچی کا کہنا تھا کہ ” ہاں ، یہ ایک اور تنازعہ ہے ، کچھ رپورٹس کہتی ہیں کہ نقیب اللہ محسود کے آصف زرداری کی صاحبزادی کے ساتھ تعلقات تھے ، اس کے بعد نتیجے کو الجھا کر غلط سمت دی گئی اور بلاآخر ریاست کو بدنام کرنے کی کوشش کی گئی “۔ اب نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے سینئیر صحافی و تجزیہ کار ظفر ہلالی نے سابق صدر آصف علی زرداری کی صاحبزادی بختاور بھٹو زرداری سے متعلق خبر دے دی۔

انہوں نے کہا کہ سنا ہے کہ بختاور کی سندھی وڈیرے کے ساتھ شادی ہونے لگی ہے بہت اچھی بات ہے اگر وہ خوش ہے۔ لیکن دلچسپ بات یہ تھی کہ آصفہ بھٹو زرداری آ کر تقریر کر رہی تھی اور اس موقع پر بلاول نہیں تھا۔ آصفہ کی عمر کیا ہو گی جو اسے پاکستان کی سیاست کے گند میں لا رہے ہیں۔ آصفہ پڑھی لکھی ہے، اچھی بچی ہے، ایسا لگ رہا تھا کہ بی بی بول رہی ہے۔ اب اس کو کیا فائدہ ہو گا سیاست میں گھسیٹنے کا ۔ انہوں نے بتایا کہ آصفہ بھٹو کو اسی لیے سیاست میں لایا جا رہا ہے کیونکہ سننے میں آیا ہے کہ آصف علی زرداری اور بلاول کی آپس میں کوئی جھڑپ ہوئی ہےاور وہ کافی دن سے اُن سے ملے نہیں لیکن اس بات کی تصدیق نہیں ہو سکی البتہ افواہیں تو ہیں اور مجھے بھی ایک ایسے شخص نے بتایا ہے جو ایسی چیزوں پر نظر رکھتا ہے۔ دوسری جانب یہ اطلاعات بھی موصول ہو رہی ہیں کہ پیپلز پارٹی نے سابق صدر آصف زرداری اور فریال تالپور کی عدالتوں میں پیشی کے موقع پرپی پی کارکنوں کی انتہائی کم تعداد کی تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ کارکنوں کی کم تعداد کا کوئی پارٹی رہنما ذمہ داری لینے کو تیار نہیں ہے۔ پاکستان پیپلزپارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو زرداری کی آمد کے باوجود کارکنان کے نہ پہنچنے کا نوٹس لے لیا گیا جبکہ سندھ سے تعلق رکھنے والے وزراء کی عدم شرکت پر بھی حیرانگی کا اظہار کیا گیا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.