اب حکومت کیا سوچ رہی ہے ؟ تازہ ترین خبر

لاہور (ویب ڈیسک) کورونا متاثرین کی تعداد میں تیزی سے اضافے کے باوجود عوام نے سمارٹ لاک ڈاؤن کو مذاق بنالیا، انتظامیہ کیلئے مختلف شہروں میں لوگوں کو گھر تک محدود رکھنا مشکل ہو گیا۔لاہور میں شہریوں کو گھروں میں بند رکھنا مشکل ہوگیا، سیل علاقوں میں غیر ضروری نقل و حرکت روکی نہ جاسکی۔

ماسک کی پابندی کی دھجیاں بھی اُڑائی جارہی ہیں۔ راولپنڈی میں لاک ڈاؤن کو شہریوں نے ہوا میں اڑا دیا۔انتظامیہ نے لاک ڈاؤن میں3دن کی توسیع کر دی۔ کراچی میں سمارٹ لاک ڈاؤن کے نام پر مذاق کیا گیا ۔ گلی محلوں میں ٹینٹ لگاکر فرض پورا کردیا گیا۔ اندرون سندھ بھی لاک ڈاؤن برائے نام ہی ہے ۔ پشاور میں بھی شہری لاک ڈاؤن کو خاطر میں نہیں لارہے تو کہیں پولیس اہلکار موجود نہیں۔گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں ایس او پیز کی 9305 خلاف ورزیاں رپورٹ ہوئیں،839 مارکیٹوں اور 3 انڈسٹریز کو سیل جبکہ 1522 گاڑیوں پر جرمانہ کیا گیا۔ ادھر پنجاب بھر میں عوامی مقامات پر منہ ڈھانپنے کی پابندی لاگو کر دی گئی۔ نوٹیفکیشن کے مطابق شہریوں کیلئے عوامی مقامات پر منہ ڈھانپنا لازم ہو گا۔منہ ڈھانپے بغیر آئے گاہکوں کو کسی قسم کی سروس فراہم نہ کی جائے ۔ سی سی پی او لاہور ذوالفقار حمید کے مطابق 14 روز کے دوران ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 679 مقدمات درج کیے گئے ،ایک ہزار 782 دکانیں سیل کی گئیں جبکہ معمولی خلاف ورزی پر 19 ہزار 598 دکانداروں اور شہریوں کو وارننگ دی گئی ہے ۔ضلعی انتظامیہ کے افسران نے لاک ڈائون علاقوں میں دورے کیے ۔ گارڈن ٹائون میں دو ہوٹل اور ایک دکان کو سیل کیا گیا۔ شاہدرہ میں 8 آکسیجن سلنڈر ضبط کئے گئے جبکہ دو دکانوں کو اوورچارجنگ پر بند کر دیا گیا، شالیمار میں فیکٹری کیخلاف کارروائی کی گئی۔ بھٹہ چوک میں متعدد دکانوں اور سٹور کو سیل کرتے ہوئے 30 ہزار روپے کا جرمانہ بھی کیا گیا ہے ۔ ادھروفاقی وزیر اسد عمر کی زیرصدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا۔صوبائی چیف سیکرٹریزنے سمارٹ لاک ڈاؤن پر عملدرآمد سے متعلق بریفنگ دی۔وفاقی وزیراسدعمر نے تمام اداروں کو لاک ڈاؤن میں رہنے والے ملازمین کیخلاف انضباطی کارروائی نہ کرنے کی ہدایات جاری کردیں۔ اسدعمر نے کہا کورونا کا پھیلائوروکنے کیلئے اقدامات کے نتائج 15روزمیں سامنے آئینگے ۔صوبائی حکومتیں سمارٹ لاک ڈائون پر عملدرآمدکیلئے سخت اقدامات کریں۔ اجلاس کو بتایا گیا خیبرپختونخوا میں پشاور،مالاکنڈ،سوات،ہری پور،نوشہرہ اورمردان میں لاک دائون کیاگیا،5لاکھ افرادکوسمارٹ لاک ڈائون کے ذریعے کنٹرول کیاگیا۔ پنجاب کے 8بڑے شہروں کی10لاکھ آبادی پرسمارٹ لاک ڈائون کیا گیا۔12ہزارگاڑیوں کو ایس اوپیزکی خلاف ورزی پرجرمانے کئے گئے ۔ سندھ میں24اضلاع کی 50لاکھ آبادی پرسمارٹ لاک ڈائون کیاگیا۔آزاد کشمیر میں 59 مقامات پرسمارٹ لاک ڈائون کے تحت پابندیاں لگائی گئیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.