پاکستان کا وہ واحد صوبہ جہاں پر کورونا وائرس کے ٹیسٹ فری کر دیئے گئے

گلگت(نیوز ڈیسک) پاکستان میں اب تک کورونا وبا سے مجموعی طور ہر 93افراد جاں بحق ہوچکے ہیں جبکہ 44 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ آج ایک ہی دن میں پاکستان میں کورونا کے 336نئے مریض سامنے آئے ہیں جس سے ملک میں مریضوں کی تعداد 5ہزار 374ہوگئی ہے۔اب تک ملک میں 1ہزار 95مریض صحتیاب ہوکر گھروں کو جاچکے ہیں۔

وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حفیظ الرحمان نے کہا ہے کہ صوبے میں کورونا کیسسز کی تعداد230ہوگئی ہے جبکہ 155مریض صحتیاب ہوئے، ایکٹیوکیسز کی تعداد 72 ہے۔تفصیلات کے مطابق پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیراعلیٰ کا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان واحد صوبہ ہے جہاں کرونا ٹیسٹ فری ہورہا ہے، وائرس اسپتالوں کو متاثر نہیں کیا، ہوٹلز کو قرنطینہ اور آئسولیشن وارڈ بنایا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ تمام ٹریولنگ ہسٹری کے ٹیسٹ مکمل ہوچکے ہیں، چھپنے والے کرونا مریضوں پر 50ہزار تک جرمانہ ہوگا، گلگت بلتستان میں 50ہزار مستحق افراد میں راشن تقسیم کیا جائے گا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ 11ہزار مستحقین میں راشن تقسیم کرچکے ہیں۔ دوسری جانب پاکستان میں کورونا کے 336نئے میرض سامنے آگئے، مزید 7 افراد جاں بحق ہوگئے، متاثرہ افراد کی تعداد 5374ہوگئی۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان میں اب تک کورونا وبا سے مجموعی طور ہر 93افراد جاں بحق ہوچکے ہیں جبکہ 44 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ آج ایک ہی دن میں پاکستان میں کورونا کے 336نئے مریض سامنے آئے ہیں جس سے ملک میں مریضوں کی تعداد 5ہزار 374ہوگئی ہے۔اب تک ملک میں 1ہزار 95مریض صحتیاب ہوکر گھروں کو جاچکے ہیں۔ سب سے زیادہ کیسز پنجاب میں سامنے آئے ہیں جہاں انکی تعداد 2ہزار 596ہے جبکہ سندھ میں کورونا کے مریضوں کی تعداد 1ہزار 411 ہے۔ بلوچستان میں کورونا سے اب تک 230افراد متاثر ہوئے ہیں، گلگت بلتستان میں 224، خیبرپختونخوا میں 744، آزاد جموں وکشمیر میں 40 اور اسلام آباد میں 131 افراد کورونا سے متاثر ہوچکے ہیں۔دوسری جانب کورونا کی موجودہ صورتحال کے پیشِ نظر قومی رابطہ کمیٹی نے لاک ڈاؤن کو مزید توسیع دینے کا فیصلہ کرلیا، لاک ڈاؤن میں توسیع کا کل باقاعدہ اعلان کیا جائے گا، اجلاس میں تعمیراتی سیکٹر کا پہلا فیز کل سے کھولنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت قومی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں چاروں وزراء اعلیٰ نے شرکت کی۔اجلاس میں ملک بھر میں کورونا ٹیسٹنگ کی صلاحیت بڑھانے اور عوامی آگاہی مہم کو مزید مئوثر انداز میں جاری رکھا جائے گا۔ اجلاس میں تمام وزراء اعلیٰ نے لاک ڈاؤن اور کورونا وائرس کی صورتحال سے متعلق اپنی تجاویز پیش کیں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے لاک ڈاؤن میں توسیع سے متعلق اپنی تجویز پیش کی ہے کہ وفاقی حکومتی تمام فیصلے سندھ کی تجاویزکو مدنظررکھ کر کرے۔جس پر قومی رابطہ کمیٹی نے لاک ڈاؤن سے متعلق صوبوں کے ساتھ مل کرمشترکہ فیصلے کرنے پر اتفاق کیا۔ اسی طرح اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ تعمیراتی سیکٹر کا پہلا فیز کل کھولا جائے گا۔ قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں ملک بھر میں لاک ڈاؤن میں مزید توسیع کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے، جس کا باقاعدہ اعلان آئندہ 24 گھنٹے میں کردیا جائے گا۔ وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے میڈیا بریفنگ میں بتایا کہ کل صبح قومی رابطہ کمیٹی کا کل پھر اجلاس ہوگا، جس میں15 مارچ کے بعد کیا کرنا ہے،اس حوالے سے حکمت عملی بنائی جائے گی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.