انتظار کی گھڑیاں ختم ۔۔۔ لاک ڈاؤن کب تک ختم کر دیا جائے گا؟ وزیر اعظم عمران خان نے بڑی خبر بریک کر دی

کوئٹہ (ویب ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ 14 اپریل کو صوبوں سے مشاورت کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی کا فیصلہ کیا جائے گا۔کوئٹہ پہنچنے پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ کورونا کی وجہ سے ہونے والے لاک ڈاوَن سے پورا ملک متاثر ہے، لاک ڈاون کے دوران مزدور

طبقہ سب سے زیادہ متاثرہواہے، آج ملک کی تاریخ میں سب سے بڑا پروگرام شروع کیاگیاہے، ایک کروڑ 20لاکھ خاندانوں کو 12ہزار روپے پہنچا رہے ہیں، کورونا کی وجہ سے بلوچستان سب سے زیادہ متاثر ہواہے، یہاں سب سے زیادہ غربت ہے۔وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ لاک ڈاؤن کے حوالے سے 14 اپریل کو صوبوں سے مشاورت کی جائے گی اور غور کیا جائے گا کہ لاک ڈاؤن میں کیسے نرمی لائے جائے۔انہوں نے کہا کہ حکومت کورونا کے خلاف جنگ عوام کے تعاون کے بغیر نہیں جیت سکتی، چین میں حکومت اور عوام نے ملکر کورونا کے خلاف جنگ جیتی۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کوئٹہ میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ کرونا وائرس کے باعث پورا ملک متاثر ہے، کرونا کی وجہ سے بلوچستان بھی زیادہ متاثر ہے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ آج ہم نے بہت بڑا ریلیف پروگرام شروع کیا ہے،پاکستان کی تاریخ میں کبھی ایسا نہیں ہوا ہے،آج ہم ایک کروڑ 20 لاکھ خاندانوں کو رقم پہنچا رہے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ کوشش ہے جو غریب طبقہ متاثر ہوا اس کی سب سے پہلے مدد کی جائے، بلوچستان میں غریب طبقے کی تعداد زیادہ ہے اس لیے یہاں آیا۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ غریبوں کو ریلیف دینے کے لیے مشاورت جاری ہے، 14اپریل کوفیصلہ کریں گے بلوچستان میں کیا چیزیں کھولنی ہیں۔انہوں نے کہا کہ لاک ڈاؤن جاری رکھیں یا نہیں، 14 اپریل کو صوبوں کے ساتھ بیٹھ کر فیصلہ ہوگا۔وزیراعظم پاکستان نے کہا کہ کرونا وائرس کے خلاف پوری قوم نے مل کر لڑنا ہے، ہمیں تو چھوڑیں اس وقت مغربی ممالک بھی مشکل میں ہیں،اس وقت چین کرونا وائرس کے خلاف جنگ جیت چکا ہے، چین کی حکومت نے بھی عوام کی مدد سے جنگ جیتی ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.