کھاد کی قیمتوں میں 400 روپے تک کمی : عمران خان نے کسانوں اور زمینداروں کے دل خوش کر دیے

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت اجلاسوں میں بے نظیرانکم سپورٹ کا وظیفہ بڑھانے اورنئے لنگر خانے کھولنے کا فیصلہ کیاگیاجبکہ حکومت نے اپنی اتحادی جماعتوں کو یقین دہانی کرائی ہے کہ ان کے جائزمطالبات پورے کئے جائیں گے ۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اتحادیوں کے ساتھ کندے سے کندھاملاکرچلیں گے ‘

حکومت اداروں کی ساکھ مجروح نہیں ہونے دیگی‘کرپشن کے خلاف ترجیحات پر کوئی سمجھوتہ نہ کیاجائے.پانچ ماہ میں اقوام متحدہ کے دواجلاس ہوئے جو اس بات کا اعتراف ہے کہ مقبوضہ وادی میں مزیدکشیدگی کا خطرہ ہے ‘یوم یکجہتی کشمیر بھرپوراندازمیں منایاجائیگا‘عام آدمی کو ریلیف کی فراہمی موجودہ حکومت کی واحد ترجیح ہے‘ مشکل معاشی حالات کے باوجود عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کیا جائے. تمام متعلقہ وزارتیں دو روز کے اندر عوام کو ریلیف کی فراہمی کے لئے کئے گئے اقدامات کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ پیش کریں ، کھاد کی قیمتوں میں 400 روپے تک کمی لانے کے لئے اقدامات اور بی آئی ایس پی کے تحت ماہانہ وظیفے میں اضافہ کی تجویز کو جلد حتمی شکل دی جائے.سعودی عرب پاکستان کا عظیم ترین دوست ہے ‘تہران سے ہمارے اچھے تعلقات ہیں، ایران سعودیہ فوجی تصادم پاکستان کےلئے تباہ کن ہوگا ‘ ایٹمی صلاحیت کے حامل ملک بھارت کو انتہاپسند چلا رہے ہیں۔تفصیلات کے مطابق جمعرات کو وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت اشیائے ضروریہ کی قیمتوں پر کنٹرول اور عام آدمی کو ریلیف پہنچانے کے اقدامات کے حوالے سے اجلاس ہوا۔اس موقع پر وزیرِ اعظم نے کہا کہ حکومت کو اس بات کا بخوبی ادراک ہے کہ مشکل ترین ملکی معاشی حالات، معیشت کی بہتری کے لئے کی جانے والی اصلاحاتی عمل میں عوام کے لئے اور خصوصاً کم آمدنی والے اور غریب طبقے کے لئے مشکلات ہیں۔ حکومت کی بھرپور کوشش ہے کہ مشکل معاشی حالات کے باوجود عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کیا جائے ۔

وزیرِ اعظم نے کہا کہ اشیا ضروریہ کی فراہمی کو یقینی بنانے اور ان کی قیمتوں پر کنٹرول، ناجائز منافع خوری اور ذخیرہ اندوزی کی روک تھام کے لئے تمام ممکنہ انتظامی اقدامات بروئے کار لائے جا رہے ہیں‘ ان اقدامات کے علاوہ عوام کو ریلیف فراہم کرنے کے لئے مزید اقدامات کی نشاندہی کی جائے اور اس سلسلے میں ٹائم لائنز پر مبنی واضح لائحہ عمل تشکیل دیا جائے جس میں تمام وزارتوں کی ذمہ داریوں کا تعین کیا جائے۔ دریں اثناءوزیر اعظم کی زیر صدارت اعلیٰ سطح اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ 5فروری کو یوم یکجہتی کشمیر بھرپور انداز میں منایا جا ئے گا۔ جمعرات کو وزیر اعظم کی زیرصدارت اجلاس میں چیف آف آ رمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ، معاون خصوصی ڈاکٹر معید یوسف، ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید‘ سیکرٹری خارجہ سہیل محمود کے علاوہ اعلیٰ سول و فوجی حکا م نے شرکت کی۔ اجلاس میں ایک دفعہ پھر وزیراعظم عمران خان نے اپنی تمام اتحادی جماعتوں کا شکریہ ادا کیا ہے جنہوں نے پاکستان کے وسیع تر قومی مفاد کے لئے ان کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا، اتحادیوں کے حوالے سے چلنے والی تمام افواہیں اور قیاس آرائیاں دم توڑ چکی ہیں، ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بتایا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں تیسری مرتبہ مسئلہ کشمیر پر بحث ہوئی ہے۔پارلیمنٹ میں قانون سازی کا عمل مثبت انداز سے آگے بڑھنے پر وزیراعظم نے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عوامی مفاد میں جو قانون سازی ہوئی ہے اس سے پارلیمنٹ کی ساکھ بہتر ہوئی ہے،عوامی ریلیف اور سہولیات کے لئے قانون سازی کے عمل کو آگے بڑھانے کے لئے قائم کمیٹی کو وزیراعظم نے ہدایات دیں کہ نیب آرڈیننس کے حوالے سے ہمارے بل اور اپوزیشن کی ترمیم کو باریک بینی سے دیکھے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.