پاکستان کی بہت بڑی کامیابی۔۔۔!!! 19 سال بعد امریکہ نے پابندی اُٹھا لی، پاکستان اور امریکہ کے مابین براہ راست پروازوں کے آغاز کا اعلان

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) امریکا نے پابندی اٹھا لی، 19 سال بعد پی آئی اے کا امریکا کیلئے براہ راست پروازوں کے آغاز کا اعلان، پی آئی اے براہ راست پروازوں کا آغاز رواں برس مئی سے کرے گی، ابتدائی طور پر ہفتہ وار کل 3 پروازیں چلائی جائیں گی۔ تفصیلات کے مطابق امریکا نے 19

سال تک پاکستان سے اپنے ملک کیلئے براہ راست پروازوں پر پابندی عائد کیے رکھی تھی جسے اب ختم کر دیا گیا ہے۔بتایا گیا ہے کہ 2001 میں نائن الیون حملوں کے بعد امریکی حکام نے پاکستان سے امریکا کیلئے براہ راست پروازوں پر پابندی عائد کر دی تھی۔ یہ پابندی 19 سال تک برقرار رہی جو اب ختم کر دی گئی ہے۔ پاکستانی حکام گزشتہ 2 برسوں سے کوشش کر رہے تھے کہ امریکا کو پابندی کے خاتمے کیلئے راضی کیا جائے۔اب بتایا گیا ہے کہ دونوں ممالک کے تعلقات میں بہتری آنے اور پاکستان کے حالات بہتر ہونے کے بعد بالآخر امریکی حکام نے اجازت دے دی ہے کہ اب پاکستان سے امریکا کیلئے براہ راست پروازیں چلائی جا سکتی ہیں۔اس حوالے سے مزید بتایا گیا ہے کہ قومی ائیرلائن پی آئی اے نے امریکا کیلئے براہ راست پروازوں کا آپریشن شروع کرنے کی تیاریوں کا آغاز کر دیا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ پی آئی اے مئی 2020 سے امریکا کیلئے براہ راست پروازوں کو آغاز کر دے گی۔ ابتدائی طور پر پی آئی اے امریکا کیلئے ہفتہ وار 3 براہ راست پروازیں چلائے گی۔ بعد ازاں پروازوں کی تعداد میں اضافہ کر دیا جائے گا۔ امریکا کیلئے براہ راست پروازیں چلانے سے پی آئی اے کو اچھا خاصا مالی فائدہ ہوگا۔اس سے قبل امریکی صادر ڈونلڈ ٹرمپ اور وزیر اعظم عمران خان کے درمیان تیسری ملاقات، یہ ملاقات ورلڈ اکنامک فورم میں اجلاس کے دوران دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات ہوئی، وزیر اعظم عمران خان اور ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان ورلڈ اکناملک فورم کے اجلاس کے دوران تیسری ملاقات ہوئی ہے، ملاقات میں وزیر اعظم عمران خان نے امریکی صدر کو کہا کہ آپ کو دوبارہ دیکھ کر خوشی ہورہی ہے، جس پر امریکی صدر نے کہا کہ عمران خان میرے دوست ہیں، علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان اور ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان ملاقات میں افغان امن معاہدے کے حوالے سے بھی گفتگو ہوئی، امریکی صدر نے ایک بار پھر کہا کہ وہ مسئلہ کشمیر کو بڑی گہری نظر سے دیکھ رہے ہیں،اور وہ چاہتے ہیں کہ بھارت اور امریکہ کے درمیان جاری یہ دیرینہ مسئلہ ہمیشہ کے لیے حل ہوجائے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.