(ن) لیگ کس منہ سے ڈسکہ کا ضمنی الیکشن لڑ رہی ہے ؟ حامد میر نے ایسی بات کہہ دی کہ مریم نواز بھی ہکا بکا رہ جائیں گی

لاہور (ویب ڈیسک) نامور کالم نگار حامد میر اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چند دن پہلے یوسف رضا گیلانی نے اپنے حامی سینیٹروں کو ظہرانے پر بلایا۔ ان میں بلوچستان عوامی پارٹی (باپ) کے سینیٹر بھی شامل تھے۔ انہی میں سے ایک سینیٹر نے بڑے مزے لے کر مجھے

ظہرانے میں ہونے والی باتیں سنائیں اور کہا کہ کبھی سوچا بھی نہ تھا کہ میں حکومت اور اپوزیشن دونوں کے مزے لوں گا۔ہمارے اس سینیٹر دوست کا دن گیلانی کے ساتھ اور شام سنجرانی کے ساتھ گزرتی ہے۔ فی الحال میرا موضوع یہ نہیں ہے کہ ’’باپ‘‘ کے سینیٹرز نے کس کے حکم پر گیلانی کی

حمایت کی؟ میرا موضوع یہ ہے کہ ہمارے کچھ سیاست دان نسل در نسل غلطیاں کرتے ہیں لیکن غلطیوں سے سبق نہیں سیکھتے۔ ستم ظریفی دیکھیے کہ ایک طرف بلاول صاحب فرماتے ہیں کہ مسلم لیگ (ن) کے کچھ لوگوں کو گیلانی صاحب کی کامیابی ہضم نہیں ہوئی حالانکہ گیلانی صاحب مسلم لیگ (ن) کے بغیر سینیٹر نہیں بن سکتے تھے۔ دوسری طرف مسلم لیگ (ن) نے

اسمبلیوں سے استعفوں کے معاملے پر پیپلز پارٹی کے ساتھ پھڈا کیا اور اب مستعفی ہونے کی بجائے ڈسکہ اور کراچی سے ضمنی الیکشن لڑ رہی ہے۔ دونوں جماعتیں اس اعلامیے کو فراموش کر چکی ہیں جو ستمبر 2020میں آل پارٹیز کانفرنس نے منظور کیا تھا۔ اس اعلامیے کا مقصد پاکستان میں آئین و قانون کی بالادستی قائم کرنا اور غیرسیاسی طاقتوں کی سیاست میں مداخلت بند کرنا تھا۔ اس اعلامیے کی منظوری کے بعد کبھی

پیپلز پارٹی اور کبھی مسلم لیگ ن بیک چینل سے انہں طاقتوں سے مذاکرات کرتی رہی ہیں جن پر اپنے جلسوں میں تنقید کیا کرتی تھیں۔ ان بڑی اپوزیشن جماعتوں کے قول و فعل کا تضاد ہی وزیراعظم عمران خان کی بقا کا راز ہے۔ میں نے اپنی صحافتی زندگی میں اتنی نااہل
حکومت نہیں دیکھی جتنی نااہل عمران خان کی حکومت ہے طاقتوں سے مذاکرات لیکن اس کے باوجود عمران خان کی حکومت قائم ہے کیونکہ اپوزیشن ان سے زیادہ نااہل ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی ایک خاتون رکن قومی اسمبلی کو اس ناچیز نے ایک ٹی وی چینل پر یہ کہتے سنا کہ ذوالفقار علی بھٹو جنرل ایوب کو ڈیڈی کہتے تھے۔ اگلے روز ان صاحبہ سے پارلیمنٹ میں ملاقات ہو گئی۔ میں نے پوچھا کہ کیا آپ جانتی ہیں کہ بھٹو صاحب نے معاہدہ تاشقند کے بعد ایوب خان کی حکومت چھوڑ دی تھی اور 1967میں پیپلز پارٹی بنا کر ایوب خان کے خلاف

تحریک میں حصہ لیا تھا؟ موصوفہ نے معصوم سی شکل بنا کر کہا نہیں مجھے ’’اتنی پرانی بات‘‘ کا نہیں پتہ۔ میں نے پوچھا آپ کو یہ تو پتہ ہوگا کہ آپ کے سارے بزرگ کسی زمانے میں پیپلز پارٹی کے ساتھ تھے؟ کہنے لگیں جی ہاں یہ تو پتہ ہے لیکن آپ کیوں پوچھ رہے ہیں؟ میں نے کہا کہ کل رات آپ قوم کو بھٹو اور ایوب خان کا تعلق سمجھا رہی تھیں۔ یہ سن کر وہ مسکرائیں اور بولیں اگر بلاول ہمیں سلیکٹڈ کہے گا تو ہم بھی اسے یاد دلائیں گے اس کا نانا کیا تھا۔پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) دونوں کو یہ یاد نہیں رہا کہ 2006میں محترمہ بےنظیر بھٹو اور نواز شریف نے میثاقِ جمہوریت پر دستخط کئے تھے اور اس میثاق کا مقصد وہی تھا جو

ستمبر 2020میں اے پی سی کے جاری کردہ اعلامیے کا تھا۔ 2006کے میثاقِ جمہوریت کی وجہ ماضی کی آمر حکومتوں کا سیاستدانوں کے ساتھ سلوک تھا۔ اس حقیقت میں کوئی شک نہیں
کہ ذوالفقار علی بھٹو کو ایوب خان نے پہلی دفعہ وزیر بنایا اور نواز شریف کو ضیا الحق نے وزیر بنایا لیکن دونوں مقبول عوامی رہنما اس وقت بنے جب انہوں نے اسٹیبلشمنٹ کے خلاف بغاوت کی۔ بھٹو اور نواز شریف نے کبھی بغاوت کی، کبھی مفاہمت کی لیکن طاقتور اداروں کے ساتھ نہ چل پائے۔ بھٹو نے ایوب خان کے خلاف بغاوت کی لیکن شیخ مجیب کے خلاف جنرل یحییٰ خان کا ساتھ دیا۔ اقتدار ملنے کے بعد حمود الرحمٰن کمیشن رپورٹ شائع کرنے سے

گریز کیا، طاقتوروں کے دبائو پر معراج محمد خان جیسے لیفٹسٹ وزیروں کو کابینہ سے نکال دیا لیکن پھر تختہ دار پر چڑھا دیے گئے۔ وہ چاہتے تو جان بچا سکتے تھے لیکن انہوں نے ضیا الحق کے ساتھ مفاہمت سے انکار کردیا۔ نواز شریف بھی کبھی بغاوت اور کبھی مفاہمت کرتے رہے۔ پرویز مشرف کے ہاتھوں برطرف ہوئے اور جب پرویز مشرف پر آئین سے غداری کا مقدمہ شروع ہوا تو نواز شریف حکومت نے مشرف کو پاکستان سے بھگا دیا اور انہوں نے طاقتوروں کے دبائو پر کبھی پرویز رشید اور کبھی مشاہد اللہ کو کابینہ سے فارغ کیا لیکن آخر کار انہیں وزارتِ عظمیٰ سے فارغ کیا گیا۔پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) مت بھولیں کہ میثاقِ جمہوریت کے بعد محترمہ بےنظیر بھٹو نے پرویز مشرف کے ساتھ این آر او کیا لیکن این آر او کے بعد بھی محترمہ کو زندگی سے محروم کردیا گیا۔ شہباز شریف نے ہمیشہ مفاہمت کی سیاست کی لیکن اس

سیاست کے باوجود جھوٹے مقدمات میں جیل بھجوا دیے گئے۔ دونوں جماعتوں کے ساتھ مفاہمت کے نام پر دھوکہ ہوا ہے۔ محترمہ بےنظیر بھٹو کی آخری کتاب کا نام ہی ’’مفاہمت‘‘ تھا۔ اس کتاب میں انہوں نے واضح الفاظ میں لکھا کہ پرویز مشرف نے این آر او کے نام پر ان کے ساتھ دھوکہ کیا۔ بار بار دھوکہ کھانے کے باوجود ان بڑی جماعتوں نے سبق نہیں سیکھا کیونکہ یہ عوامی سیاست کے ذریعہ تبدیلی لانے پر نہیں بلکہ پاور پارلیٹکس کے ذریعے چند عہدے حاصل کرنے پر یقین رکھتی ہیں۔ انہوں نے ابھی تک اپنی جماعتوں کے اندر جمہوریت قائم نہیں کی۔ جب تک ان جماعتوں کے اندر جمہوریت نہیں آئے گی یہ مضبوط نہیں ہوں گی اور بیک ڈور چینل سے مذاکرات کے ذریعہ اقتدار میں آنے پر مجبور ہوں گی۔ ان جماعتوں کو حقیقی تبدیلی کے لئے پہلے اپنے اندر جمہوریت قائم کرنا ہوگی۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *