خان کی یاری سب پر بھاری ۔۔۔ وزیراعظم عمران خان کا دورہ ملائیشیا ،واپسی پر پاکستانیوں کےلیے کونسا بڑا تحفہ متوقع ہے ؟ پاکستانیوں کو خوشخبری سنا دی گئی

اسلام آباد(ویب ڈیسک)وزیراعظم کا دورہ ملائیشیا کا فیصلہ، دورے کی تاریخ کا اعلان کر دیا گیا، عمران خان اپنے وفد کے ہمراہ اگلے ماہ 3 فروری کو کوالالمپور جائیں گے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان 3 فروری کو ملائیشیا کا دورہ کریں گے،وزیراعظم عمران خان ملائیشین ہم منصب مہاتیر محمد سے ملاقات کریں گے۔دونوں رہنماؤں کے

درمیان ہونے والی ملاقات بہت اہم تصور کی جا رہی ہے۔ملائیشین وزیراعظم سے ملاقات میں اُمتِ مسلمہ کے اتحاد پر بات چیت ہو گی۔وزیراعظم عمران خان مہاتیر محمد کو ملائیشیا سمٹ میں عدم شرکت کی وجوہات سے بھی آگاہ کریں۔واضح رہے کہ اس سےقبل وزیر اعظم عمران خان نے ملائیشیا میں 18 سے 20 دسمبر تک منعقد ہونے والے کوالالمپور (سمٹ) اجلاس میں شرکت کرنی تھی تاہم دورہ سعودی عرب کے بعد وزیر اعظم نے ملائیشیا کا طے شدہ دورہ منسوخ کر دیا تھا، کوالالمپور سمٹ میں ترک صدر رجب طیب اردوان، قطری امیر شیخ تمیم بن حماد الثانی اور ایران کے صدر حسن روحانی نے بھی شرکت کی تھی۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ چین نے مشکل حالات میں پاکستان کی مدد کی ہے,سی پیک اتھارٹی دوسرے مرحلے کے تحت منصوبوں پر عملدرآمد کی رفتار تیز کرے۔ان خیالات کا اظہار وزیراعظم نے پاک چین اقتصادی راہداری (سی پیک)کے منصوبوں پر جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت مختلف منصوبوں پر پیشرفت کے حوالے سے اعلی سطحی جائزہ اجلاس ہوا۔ وزیراعظم کو پاک چین اقتصادی راہداری کے تحت مرحلہ وار قلیل مدتی، وسط مدتی اور طویل مدتی منصوبوں پر پیشرفت کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی۔اجلاس میں وفاقی وزیر حماد اظہر، وفاقی وزیر اسد عمر، مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ اور وفاقی وزیر علی زیدی، چیئرمین سی پیک اتھارٹی لیفٹیننٹ جنرل (ر)عاصم سلیم باجوہ نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔اجلاس کے دوران وزیراعظم کو سی پیک منصوبوں پر مرحلہ وار قلیل مدتی، وسط مدتی اور طویل مدتی منصوبوں پر تفصیلی بریفنگ دی گئی۔بریفنگ کے دوران وزیراعظم کو بتایا گیا کہ سی پیک کے پہلے مرحلے میں توانائی اور سڑکوں کے بیشتر منصوبے مکمل ہو چکے ہیں، گوادر بندرگاہ اور ایئر پورٹ پر کام مرحلہ وار طریقے سے جاری ہے، اورنج لائن منصوبہ مکمل ہو چکا ہے، کوئٹہ ریلوے کی فزیبلٹی پر مشاورت جاری ہے۔اس موقع پر وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پاک چین اقتصادی راہداری فیز ٹو پر عملدرآمد کے حوالے سے آئندہ جائزہ اجلاس میں تفصیلی بریفنگ دی جائے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ چین نے مشکل حالات میں پاکستان کی مدد کی ہے، سی پیک منصوبہ ہمہ جہتی پاک چین تعلقات کا مظہر ہے, سماجی شعبوں میں چین کے تجربے سے مکمل طور پر استفادہ کرنے کی ضرورت ہے۔ان کا کہنا تھا کہ سی پیک اتھارٹی دوسرے مرحلے کے تحت منصوبوں پر عملدرآمد کی رفتار تیز کرے، بین الوزارتی کوارڈینیشن کو مزید موثر بنایا جائے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.