کے پی کے کابینہ سے نکالنے جانے پر سابق وزیر سیاحت عاطف خان میدان میں آگئے

پشاور (ویب ڈیسک) کے پی کے کابینہ سے نکالنے جانے پر سابق وزیر سیاحت عاطف خان میدان میں آگئے۔خیبر پختون خواہ حکومت میں اختلافات پر تین صوبائی وزراء کو کابینہ سے فارغ کر دیا گیا ہے جن میں عاطف خان بھی شامل ہیں اور انہوں نے کہا کہ ابھی فی الحال میں کوئی

بیان نہیں دینا چاہتا ہوں ۔ تفصیلات کے مطابق سابق وزیر سیاحت عاطف خان کو خیبر پختون خواہ کابینہ سے فارغ کر دیا گیاہے جس پر انہوں نے فی الحال بیان جاری کرنے سے انکار کر دیا ہے اور ہاہے کہ ساتھیوں سے بات چیت کے بعد لائحہ عمل طے کروں گا ، وزیراعلیٰ محمود خان اور پرویز خٹک نے گزشتہ روز وزیراعظم سے ملاقات کی تھی ۔ میڈیارپورٹس کے مطابق کئی روز سے خیبرپختونخواحکومت میں اختلافات کی خبریں گردش کررہی تھیں ،تین صوبائی وزراجن میں (عاطف خان،شہرام ترکئی اور شکیل احمد)شامل تھے ،وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کیخلاف لابنگ کررہے تھے جس پر وزیراعلیٰ محمود خان نے ایکشن لیتے تینوں وزرائ کو عہدوں سے ہٹا دیا،وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے تمام معاملات سے وزیراعظم عمران خان کو آگاہ کردیاتھا کہ تینوں وزراان کیخلاف لابنگ میں مصروف ہیں اورتینوں وزراءترقیاتی کاموں میں رکاوٹ بن رہے تھے ،وزیراعلیٰ محمود خان نے ایکشن لیتے ہوئے تینوں وزراکو عہدوں سے ہٹا دیا،گورنر خیبرپختونخواشاہ فرمان کی جانب سے نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا۔ واضح رہے کہ عاطف خان وزیرسیاحت،شہرام ترکئی وزیرصحت اور شکیل احمد وزیر ریونیو تھے۔ نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے برطرف ہونے والے کے پی حکومت کے وزیر شکیل احمد کا کہنا تھا کہ پارٹی میں 7 سال ہو گئے، کبھی پارٹی ڈسپلن کی خلاف ورزی کی اور نہ کریں گے، عمران خان نے ٹکٹ دیا اور وزیر بنایا۔ انہوں نے کہا کہ وزارت سے کیوں ہٹایا گیا پتہ نہیں جس نے ہٹایا، ان سے پوچھا جائے۔ شکیل احمد کا کہنا تھا کہ حیات آباد میں اجلاس کے لیے نہیں بلکہ ڈنر کے لیے گیا تھا، اس ڈنر میں شہرام تراکئی، عاطف خان اور دیگر 5,6 دوست موجود تھے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.