پنجاب کے ٹیچنگ ہسپتالوں کے درجنوں ڈاکٹرز مستعفی ، مگر کیوں ؟ وجہ جان کر آپ بھی سر پکڑ کر بیٹھ جائیں گے

لاہور ( ویب ڈیسک ) پنجاب کے ٹیچنگ ہسپتالوں کے درجنوں ڈاکٹرز مستعفی ہوگئے، ہیلتھ کیئر میڈیکل ایجوکیشن نے ڈاکٹرز کے مستعفی ہونے کا نوٹی فکیشن جاری کر دیا، مستعفی ہونے والے ڈاکٹرز صوبے کے مختلف ہسپتالوں میں تعینات تھے۔ تفصیلات کے مطابق صوبہ پنجاب میں عین اس وقت جب کرونا وائرس اپنے عروج پر ہے، تب مختلف

ٹیچنگ ہسپتالوں میں کام کرنے والے درجنوں ڈاکٹرز مستعفی ہو گئے ہیں۔بتایا گیا ہے کہ صوبہ پنجاب کے ٹیچنگ ہسپتالوں میں کام کرنے والے 48 ڈاکٹرز نے استعفیٰ دیا ہے۔ مستعفی ہونے والے تمام ڈاکٹرز کے استعفے منظور کر لیے گئے ہیں۔ پنجاب ہیلتھ کیئر میڈیکل ایجوکیشن نے ڈاکٹرز کے مستعفی ہونے کا باقاعدہ نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ میو اسپتال کے 14، جناح اسپتال کے 7، چلڈرن اسپتال لاہور کے 6 اور ڈی جی خان اسپتال کے 4 ڈاکٹرز، لاہور جنرل اسپتال کے 3، الائیڈ اسپتال فیصل آباد، سول اسپتال بہاولپور، یکی گیٹ اسپتال، سروسز اسپتال اور لیڈی ایچی سن کے 2، 2 ڈاکٹرز، کوٹ خواجہ سعید، شاہدرہ ٹیچنگ، گوجرانوالہ ٹیچنگ اسپتال اور میاں منشی اسپتال کے 1، 1 ڈاکٹر نے مستعفی ہوئے ہیں۔ان ڈاکٹرز کی جانب سے استعفیٰ دیے جانے کی وجوہات تو معلوم نہ ہو سکیں، تاہم صوبے میں کرونا وائرس کیخلاف جنگ میں فرنٹ لائن پر لڑنے والے ڈاکٹرز کافی عرصے سے حفاظتی سامان کی مناسب فراہمی کا مطالبہ کر رہے تھے۔ جبکہ سرکاری ہسپتالوں کے او پی ڈیز کیلئے موثر ایس او پیز کا اجراء اور ان پر عملددرآمد کروانے کا مطالبہ بھی کیا جا رہا تھا۔ یہاں یہ بھی واضح رہے کہ پنجاب میں کرونا وائرس کیخلاف فرنٹ لائن پر لڑنے والے درجنوں ڈاکٹرز مہلک وبا کا شکار ہو چکے ہیں۔ جبکہ کئی ڈاکٹرز موت کے منہ میں بھی چلے گئے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.