سینئر صحافی عامر متین نے شہبازحکومت کو آڑھے ہاتھوں لے لیا

سینئر صحافی عامر متین نے شہبازحکومت کو آڑھے ہاتھوں لے لیا

لاہور(نیوز ڈیسک )امریکہ کی سعودیہ کے ذریعے روس سے سستے تیل کی خریداری, عامر متین کی پاکستان پر تنقید۔امریکہ کی سعودی عرب کے ذریعے

تیل کی خریداری یعنی امریکہ سعودی عرب کے ذریعے روس سے سستا تیل خرید رہا ہے, اس حوالے سے سینئر تجزیہ کا عامر متین نے تنقیدی ٹویٹ کردیاتجزیہ کار عامر

متین نے طنزیہ ٹویٹ کیا کہ ‏آج کا لطیفہ,امریکہ بھی سعودی عرب کے ذریعے سستا روسی تیل خرید رہا ہے۔ مگر پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جو یہ نہیں کر رہا کہ کہیں امریکہ ناراض نہ ہو جائے۔

کہیں عمران خان سچا ثابت نہ ہو جائے کہ یہ ممکن ہے۔ جھوٹ کو چھپانے کے لیے عوام کو پسنے دو۔عامر متین نئے ٹویٹ پر روس سے سستا تیل خریدنے والے ممالک کی فہرست شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ

‏یہ تقریباً پوری دنیا کی فہرست ہے جو روس سے 30 فیصد سستا تیل خرید رہی ہے۔ بھارت نے اپنی خرید مذید بڑھا لی ہے۔اب امریکہ بھی اس میں شامل ہو گیا ہے کیونکہ وہ سعودیہ سے تیل لیتا ہے جو روس سے خرید رہا ہے۔

کونسی امریکی قدغن ہے۔آج بھی یہ ممکن ہے۔ جھوٹ چل رہا ہے۔دوسری جانب امریکی صدرجوبائیڈن کےدورہ سعودی عرب سےمتعلق جدہ میں موجود ایک امریکی اہلکارنےبتایاہےکہ امریکاسعودی عرب سے تیل پیداوار فوری بڑھانے کی توقع نہیں رکھتا

بلکہ 3اگست کو اوپیک پلس کی میٹنگ کے نتائج پر نظر جمائے ہوئے ہے۔سعودی عرب نے اس امر کا ایک سے زائد بار اظہار کیا ہے کہ وہ تیل کی پیداوار بڑھانے کے بارے میں کوئی بھی فیصلہ یکطرفہ طور پر نہیں کرے گا۔سعودی عرب کا موقف ہے زیادہ بہتر اور اہم یہ ہے کہ تیل کی مارکیٹ کو تیل برآمد کرنے والے ملکوں کی اس تنظیم کے ذریعے مینج کیا جائے۔ نہ کہ تنہائی میں سعودیہ فیصلے کرے۔امریکی صدر جوبائیڈن نےبھی ایک حالیہ بیان میں کہا تھا ʼ وہ سعودیہ سے براہ راست نہیں کہیں گے بلکہ تمام خلیجی ملکوں کو ہی اس جانب متوجہ کریں گے کہ وہ مل کر تیل کی پیداوار بڑھائیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.