انصار عباسی کی بریکنگ نیوز

انصار عباسی کی بریکنگ نیوز

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو حالیہ اعلیٰ سطحی پارٹی اجلاس میں خبردار کیا گیا تھا کہ وہ اپنے اردگرد موجود آستین کے سانپوں سے ہوشیار رہیں۔خان کو بتایا گیا تھا کہ آستین کے یہ سانپ اپنے ذاتی سیاسی مفاد کے لیے پی ٹی آئی چیئرمین کو فوج کے ادارے سے تصادم کرنے پر زور ڈال رہے ہیں۔

 نامور صحافی انصار عباسی اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔پی ٹی آئی کے ذرائع نے بتایا ہے کہ پرویز خٹک اور فیصل واؤڈا ملٹری اسٹیبلشمنٹ کو تنقید کا نشانہ بنانے کی پارٹی پالیسی کو تنقید کا نشانہ بنانے میں نہیں ہچکچائے اور عمران خان کو پارٹی، فوج کے ادارے اور ملک کے بہترین مفاد کے لیے پالیسی پر نظرِثانی کا مشورہ دیا۔

ان ذرائع نے بتایا ہے کہ فیصل واؤڈا واقعی صاف گو تھے اور عمران خان سے بحث کی جنہوں نے واؤڈا کو بتایا کہ انہیں کسی کے ذریعے گمراہ کیا جا رہا ہے۔واؤڈا نے کہا ہے کہ وہ بچہ نہیں ہیں اور یہ کہ انہیں گمراہ کیا جا رہا ہے، انہوں نے عمران خان کو بتایا ہے کہ انہیں آستین کے کچھ سانپوں نے گھیر رکھا ہے جو دراصل عمران خان کو نااہل کروانے کی سازش کر رہے ہیں تاکہ

ان کی وزارتِ عظمیٰ کی راہ ہموار کی جا سکے۔واؤڈا نے کہا کہ ان میں سے کچھ سانپ تو عمران خان کے پاس اس میٹنگ میں بھی بیٹھے ہیں جہاں یہ بحث ہوئی۔عمران خان کو بتایا گیا کہ فوج کے ادارے سے محاذ آرائی کسی بھی صورت میں پی ٹی آئی کے مفاد میں نہیں بلکہ ادارے اور ملک کو نقصان پہنچانے کے ساتھ ساتھ اسے نقصان پہنچائے گی۔عمران خان کو یہ بھی بتایا گیا۔

کہ ان میں سے کچھ افراد جو ان میں اداروں اور ان کی اعلیٰ کمان کے خلاف ز ہر بھرتے ہیں، چپکے سے دوسرے فریق سے ملتے ہیں اور انہیں اپنی وفاداری کا یقین دلاتے ہیں۔ خان کو خبردار کیا گیا کہ یہ خان کے خلاف اندر سے سازش ہے اور اس کا مقصد انہیں نااہل کروانا ہے۔پارٹی ذرائع نے بتایا ہے کہ عام طور پر کچھ باہر والے شاہ محمود قریشی پر اس طرح کے طرزِ عمل کا شبہ کرتے ہیں لیکن وہ اتنے ’مکار‘ نہیں ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ واؤڈا کا حوالہ پی ٹی آئی کے ایک اور بڑے رہنما کے حوالے سے ہے جو عوام میں اور عمران خان کے سامنے بالکل مختلف انداز دکھاتے ہیں۔اطلاعات کے مطابق عمران خان نے کہا ہے کہ وہ جانتے ہیں کہ ان کے ارد گرد آستین کے سانپ موجود ہیں لیکن وہ واؤڈا سے بظاہر اتفاق نہیں کرتے جو واقعی اپنے خیالات میں دو ٹوک تھے۔

اطلاعات کے مطابق ایک اور نشست میں پرویز خٹک نے عمران خان کو بتایا کہ غیر جانبداروں (نیوٹرلز) کا مقابلہ کرنے کی ان کی پالیسی خطرناک ہے اور اس پر نظرِثانی اور اسے تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔اگرچہ پرویز خٹک اور فیصل واؤڈا اپنے اپنے خیالات میں صاف گو ہیں جن کا انہوں نے عمران خان کے سامنے اظہار کیا ہے۔موجودہ پارٹی پالیسی سے ناراض پی ٹی آئی کے رہنماؤں میں سے ایک رہنما کے مطابق وہ عمران خان کو ملٹری اسٹیبلشمنٹ کے مقابلے میں نرم کرنے کے لیے کام کرتے ہیں لیکن سازش کرنے والے انہیں دوبارہ خراب کر دیتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *